Faiz Centenary: Share Your Favorite Faiz Verse

Posted on February 13, 2011
Filed Under >Adil Najam, People, Poetry
50 Comments
Total Views: 55336

Adil Najam

February 13, 2011, marks the 100th birth anniversary of Faiz Ahmed Faiz.

From the very first post on this blog, Faiz Ahmed Faiz and his poetry has been a muse, a mentor, a monument, and a mirror to our thoughts, our wishes, our hopes and sometimes also our fears. In our posts, and also in the comments from our readers, probably no personality has been evoked more often or more fondly than Faiz Ahmed Faiz.

On this, his centenary birthday, what is the best way to remember Faiz Ahmed Faiz? We can remember his persona and personality, his politics and ideology, his life and times, his music and melody, and so much more. But there can be no greater tribute to a poet than through the power of his own poetry. And that we wish to offer as a tribute today.

Help us write this post today. Help us make this the most moving, the most authentic, and the most vital post of all. Tell us what is (are) your favorite verse(s) from Faiz Ahmed Faiz? And why? What moves you about them? What thoughts do they evoke? What sentiments do they invoke?

Let me get the ball rolling here.

Like many of you, I do not have a single favorite Faiz verse. Different verses play the chords of my sentiments at different times and in different situation. Right now one that is playing constantly in my head, is:

Halqa kee-aye baithay raho iss shammaa ko yaaro
Kuch rooshni baaqi tou hai, har chand kay kumm hai

Do share, dear readers, your favorite Faiz verses. At the very least this can become a special ‘Faiz Edition’ of bait baazi. At best it will become a people’s tribute to a people’s poet.

50 responses to “Faiz Centenary: Share Your Favorite Faiz Verse”

  1. Yasir Hasan says:

    نھ گنواؤ ناوک ِ نيم کش دل ِ ريزہ ريزہ گنوا ديا

    نھ گنواؤ ناوک ِ نيم کش دل ِ ريزہ ريزہ گنوا ديا
    جو بچے ہيں سنگ سميٹ لوتنِ داغ داغ لٹا ديا

    ميرے چارہ گر کو نويد ہوصفِ دشمناں کو خبر کرو
    وہ جو قرض رکھتے تھے جان پر وہ حساب آج چکا ديا

    جو رکے تو کوہ ِ گراں تھے ھم جو چلے تو جاں سے گزرگئے
    رہ ِ يار غم ميں قدم قدم تجھے يادگار بنا ديا

  2. Yasir Hasan says:

    نثار ميں تيري گليوں پہ

    نثار ميں تيري گليوں کے، اے وطن، کہ جہاں
    چلي ہے رسم کہ کوئي نہ سر اٹھا کے چلے
    جو کوئي چاہنے والا طواف کو نکلے
    نظر چرا کے چلے، جسم و جاں بچا کے چلے

    ہے اہل ِ دل کے ليے اب يہ نظم ِ بست و کشاد
    کہ سنگ و خشت مقيد ہيں اور سگ آزاد

    بہت ہيں ظلم کے دست ِ بہانہ جو کے ليے
    جو چند اہل ِ جنوں تيرے نام ليوا ہيں
    بنے ہيں اہل ِ ہوس مدعي بھي، منصف بھي
    کسے وکيل کريں، کس سے منصفي چاہيں

    مگر گزارنے والوں کے دن گزرتے ہيں
    تيرے فراق ميں يوں صبح و شام کرتے ہيں

    بجھا جو روزن ِ زنداں تو دل يہ سمجھا ہے
    کہ تيري مانگ ستاروں سے بھر گئي ہوگي
    چمک اٹھے ہيں سلاسل تو ہم نے جانا ہے
    کہ اب سحر تيرے رخ پر بکھر گئي ہوگي

    غرض تصور ِ شام و سحر ميں جيتے ہيں
    گرفت ِ سايہ ِ ديوار و در ميں جيتے ہيں

    يونہي ہميشہ الجھتي رہي ہے ظلم سے خلق
    نہ ان کي رسم نئي ہے، نہ اپني ريت نئي
    يونہي ہميشہ کھلائے ہيں ہم نے آگ ميں پھول
    نہ ان کي ہار نئي ہے، نہ اپني جيت نئي

    اسي سبب سے فلک کا گلہ نہيں کرتے
    تيرے فراق ميں ہم دل برا نہيں کرتے

    گر آج تجھ سے جدا ہيں تو کل بہم ہوں گے
    يہ رات بھر کي جدائي تو کوئي بات نہيں
    گر آج اوج پہ ہيں طالع ِ رقيب تو کيا
    يہ چار دن کي خدائي تو کوئي بات نہيں

    جو تجھ سے عہد ِ وفا استوار رکھتے ہيں
    علاج ِ گردش ِ ليل و نہار رکھتے ہيں

  3. Yasir Hasan says:

    ميرے دل ميرے مسافر

    ميرے دل ميرے مسافر
    ہوا پھر سے حکم صادر
    کہ وطن بدر ہوں ہم تم
    ديں گلى گلى صدائيں
    کريں رخ نگر نگر کا
    کہ سراغ کوئى پائيں
    کسى يار نامہ بر کا
    ہر اک اجنبى سے پوچھيں
    جو پتا تھا اپنے گھر کا
    سر کوئے ناشناياں
    ہميں دن سے رات کرنا
    کبھى اِس سے بات کرنا
    کبھى اُس سے بات کرنا
    تمہيں کيا کہوں کہ کيا ہے
    شب غم برى بلا ہے
    ہميں يہ بھى تھا غنيمت
    جو کوئى شمار ہوتا
    ہميں کيا برا تھا مرنا
    اگر ايک بار ہوتا

  4. Yasir Hasan says:

    مرے ہمدم مرے دوست

    گر مجھے اس کا يقين ہو مرے ہمدم مرے دوست
    گر مجھے اس کا يقين ہو کہ ترے دل کي تھکن
    تيري آنکھوں کي اداسي تيرے سينے کي جلن
    ميري دلجوئي مرے پيار سے مٹ جائے گي
    گر مرا حرف ِ تسلي وہ دوا ہو جس سے
    جي اٹھے پھر ترا اجڑا ہوا بے نور دماغ
    تيري پيشاني سے دھل جائيں يہ تذليل کے داغ
    تيري بيمار جواني کو شفا ہو جائے
    گر مجھے اس کا يقين ہو مرے ہمدم مرے دوست
    روز و شب شام و سحر ميں تجھے بہلاتا رہوں
    ميں تجھے گيت سناتا رہوں ہلکے شيريں
    آبشاروں کے بہاروں کے چمن زاروں کے گيت
    آمد ِ صبح کے مہتاب کے سياروں کے گيت
    تجھ سے ميں حسن و محبت کي حکايات کہوں
    کيسے مغرور حسيناؤں کے برفاب سے جسم
    گرم ہاتھوں کي حرارت ميں پگھل جاتے ہيں
    کيسے اک چہرے کے ٹھرے ہوئے مانوس نقوش
    ديکھتے ديکھتے يک لخت بدل جاتے ہيں
    کس طرح عارض ِ محبوب کا شفاف بلور
    يک بيک بادہ ِ احمر سے دہک جاتا ہے
    کيسے گلچيں کي لئے جھکتي ہے خود شاخ ِ گلاب
    کس طرح رات کا ايوان مہک جاتا ہے
    يونہي گاتا رہوں گاتا رہوں تيري خاطر
    گيت بنتا رہوں بيٹھا رہوں تيري خاطر
    يہ مرے گيت تيرے دکھ کا مداوا ہي نہيں
    نغمہ جراح نہيں مونس و غم خوار سہي
    گيت نشتر تو نہيں مرہم ِ آزار سہي
    تيرے آزار کا چارا نہيں نشتر کے سوا
    اور يہ سفاک مسيحا مرے قبضے ميں نہيں
    اس جہاں کے کسي ذي روح کے قبضے ميں نہيں
    ہاں مگر تيرے سوا، تيرے سوا، تيرے سوا

  5. Yasir Hasan says:

    شيخ صاحب سے رسم و راہ نہ کي

    شيخ صاحب سے رسم و راہ نہ کي
    شکر ہے، زندگي تباہ نہ کي

    تجھ کو ديکھا تو سير ِ چشم ہوئے
    تجھ کو چاہا تو اور چاہ نہ کي

    تيرے دست ِ ستم کا عجز نہيں
    دل ہي کافر تھا جس نے آہ نہ کي

    تھے شب ِ ہجر کام اور بہت
    ہم نے فکر ِ دل ِ تباہ نہ کي

    کون قاتل بچا ہے شہر ميں فيض
    جس سے ياروں نے رسم و راہ نہ کي

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*