Posted on February 13, 2011
Filed Under >Adil Najam, People, Poetry
50 Comments
Total Views: 55335

Email a copy of 'Faiz Centenary: Share Your Favorite Faiz Verse' to a friend

* Required Field






Separate multiple entries with a comma. Maximum 3 entries.



Separate multiple entries with a comma. Maximum 3 entries.


E-Mail Image Verification

Loading ... Loading ...

50 responses to “Faiz Centenary: Share Your Favorite Faiz Verse”

  1. Suhail Mirza says:

    As I push 50, new nuances of Faiz’s poetry are suddenly opening up to me, and they bring tears to my eyes almost everytime Ms Tina Sani or Begum Iqbal Bano’s pognant voices give life to his beautifully poems whether ‘bahaar aayee’ or ‘hum dekhengay’. The romance and revolt are etched side by side in the softest words and exasperating expressions Urdu language has to offer. I am certainly in no position to comment on his work, even to the extent of saying he is still ‘The greatest’ but as a person Faiz’s poetry and its lyricism and the excellent renditions have affected me like nothing else, I am simply ‘blown over’ and this tsunami continues unabated

  2. shahid says:

    jis dhaj say koi maqtal mein gaya wo shaan salamat rehti hay
    ye jaan to aani jaani hay; iss jaan ki koi baat nahin

  3. Basheer says:

    Teri umeed, tera intizar jab say hai
    na shab ko din say shikayat, na din ko shab say hai

    kisi ka dard ho kartay hain teray naam raqam
    gila hai jo bhi kissi say, tairay sabab say hai

  4. Yasir Hasan says:

    گرمي شوق نظارہ کا اثر تو ديکھو

    گرمي شوق نظارہ کا اثر تو ديکھو
    گل کھلے جاتے ہيں تو سايہ در تو ديکھو

    ايسے ناداں تو نہ تھے جاں سے گزرنے والے
    ناصحو! راہبر و راہگزر تو ديکھو

    وہ تو وہ ہيں، تمہيں ہو جائے گي الفت مجھ سے
    اک نظر تم ميرا محبوب نظر تو ديکھو

    وہ جو اب چاک گريباں بھي نہيں کرتے ہيں
    ديکھنے والو، کبھي ان کا جگر تو ديکھو

    دامن درد کو گلزار بنا رکھا ہے
    آئو، اک دن دل پرخوں کا ہنر تو ديکھو

    صبح کي طرح جھمکتا ہے شب غم کا افق
    فيض تابندگي ديدہ تر تو ديکھو

  5. Yasir Hasan says:

    وہی ہے دل کے قرائن تمام کہتے ہیں

    وہی ہے دل کے قرائن تمام کہتے ہیں
    وہ اِک خلش کہ جسے تيرا نام کہتے ہیں

    تم آرہے ہو کہ بجتی ہیں میری زنجیریں
    نہ جانے کیا مرے دیوار و بام کہتے ہیں

    یہی کنارِ فلک کا سیہ تریں گوشہ
    یہی ہے مطلع ماہ تمام کہتے ہیں

    پیو کہ مفت لگا دی ہے خون دل کی کشید
    گراں ہے اب کے مئے لالہ فام کہتے ہیں

    فقیہہ شہر سے مے کا جواز کیا پوچھیں
    کہ چاندنی کو بھی حضرت حرام کہتے ہیں

    نوائے مرغ کو کہتے ہیں اب زیانِ چمن
    کھلے نہ پھول ، اسے انتظام کہتے ہیں

    کہو تو ہم بھی چلیں فیض، اب نہیں سر دار
    وہ فرق مرتبہ خاصہ و عام ، کہتے ہیں