Prof. Jagan Nath Azad: Creator of Pakistan’s First National Anthem

Posted on June 5, 2009
Filed Under >Adil Najam, History, People, Poetry
60 Comments
Total Views: 153152

Adil Najam

I am very glad that some of our readers did recognize Prof. Jaganath Azad in our recent ATP Quiz. I am not surprised that others did not. As I had mentioned in the post, I would not have done so had it not been for a wonderful post by Zakintosh on his blog.

I am ashamed that until recently I did not know who Jagan Nath Azad was, or what he did. I am glad that I now know. I hope you are too.

First, the basics: Jagannath Azad (1918-2004) was an Urdu poet, a Punjabi Hindu, and a scholar of Iqbal’s poetry who, on the direct invitation of Mohammad Ali Jinnah, wrote Pakistan’s first national anthem, which remained Pakistan’s official anthem for its first year-and-half and whose first lines were as follows:

Aé sarzameené paak
Zarray teray haéñ aaj sitaaroñ se taabnaak
Roshan haé kehkashaañ se kaheeñ aaj tayree khaak
Aé sarzameené paak

Jagan Nath Azad was born in 1918 in Isa Khel in the Punjab (later of Atta Ullah Khan Eesakhelvi fame), he studied at Gordon College in Rawalpindi, and the University of the Punjab in Lahore. At the time of partition in 1947, he was a journalist and a poet living in Lahore. Mr.  Jinnah asked him to write a new national anthem for Pakistan. The anthem was used for 18 months, until it was replaced (after Mr. Jinnah’s death). Some time after writing the national anthem, he migrated to India, where from 1977 to 1980 he was a Professor of Urdu and head of Urdu department at the Unversity of Jammu. Prof. Azad was a noted authority on the works of Dr. Allama Mohammad Iqbal. He was awarded the President of Pakistan’s gold medal for his services to Urdu literature.

After reading Zakintosh’s post on Prof. Azad, I tried to find out more about him. I could not find any lines to the original anthem beyond the ones he quoted (which are also quoted elsewhere), but I did find much interesting information, including this very interesting speech by him on India-Pakistan relations:

hum nay zameen taqseem ki hai, dillouN ko to taqseem naheen ki

Some more detail on the anthem was available in a report in the Daily Times (June 2005):

Days before his death last year, Azad recalled, in an interview, the circumstances under which he was asked by Jinnah to write Pakistan’s national anthem: “In August 1947, when mayhem had struck the whole subcontinent, I was in Lahore working in a literary newspaper.

All my relatives had left for India and for me to think of leaving Lahore was painful. My Muslim friends requested me to stay. On August 9, 1947, there was a message from Jinnah Sahib through one of my friends at Radio Pakistan Lahore. He told me ‘Quaid-e-Azam wants you to write a national anthem for Pakistan.’”

Why him? “The answer to this question,” Azad said in the interview, “has to be understood by recalling the inaugural speech of Jinnah Sahib as Pakistan’s governor general. He said: “You will find that in the course of time, Hindus will cease to be Hindus and Muslims will cease to be Muslims, not in the religious sense because that is the personal faith of each individual, but in the political sense as citizens of the state.”

I asked my friends why Jinnah Sahib wanted me to write the anthem. They confided in me that “the Quaid wanted the anthem to be written by an Urdu-knowing Hindu.” Through this, I believe Jinnah Sahib wanted to sow the roots of secularism in a Pakistan.”

But the real gems were to be found in a very interesting article about Prof. Jagannath Azad in Dawn, by Ashfaque Naqvi, written in June 2004. It really is worth reading in full:

I saw Tilok Chand Mehroom when still at school in Lahore and was greatly impressed by his personality. A tall, robust, figure, dressed in a long coat with a ‘lungi’, he had long whiskers. He looked every inch a Muslim, but I was told that he was a Hindu and headmaster of a school in Mianwali, the place to which he belonged. And then I read his poems which happened to be in our Urdu textbooks. One was about the pathetic condition of the last resting place of the Mughal empress, Nur Jahan. I still remember two of its touching lines:

Din ko bhi yahan shab ki siyahi ka saman heh
Kehtey hein keh yeh maqbara-e-noor-e-jahan heh

Well, that was long before partition. Even in those days his son, Isakhel born, Jagan Nath Azad was counted among the prominent poets of the Punjab. It is not commonly known that after the establishment of Pakistan, the first national song (qaumi tarana as we like to call it) broadcast from Radio Pakistan was not by Hafeez Jallandhri or Faiz Ahmed Faiz but by a Hindu called Jagan Nath Azad. It ran like this:

Aey sarzameen-i-pak
Zarrey terey hein aaj sitaron sey tabnak
Roshan heh kehkashan sey kahin aaj teri khak

His devotion to Allama Iqbal has been intriguing for many. But then, he has himself said:

Merey yaqeen ko dekh amal par nazar na kar
Mera yaqeen heh daulat-eeman liye huey
Ahl-i-haram mujhey na hiqarat se dekhna
Kafir hun eik qalb-e-Musalman liye huey

I am grateful to Dr Syed Moeenur Rehman for sending me books which keep adding to my knowledge. It is never too late to learn, as they say. I knew a lot about Jagan Nath Azad but the book sent by him tells me much more about him. It is the thesis written by one of his students, Aasma Aziz, for her master’s in Urdu. Somehow, it has been printed and produced by Crescent House Publications of Jammu in Occupied Kashmir. It only deals with Jagan Nath Azad as a prose writer.

Third in line after the more famous Azads – Maulana Muhammad Hussain and Maulana Abul Kalam – Jagan Nath was born in 1918. After doing his MA in Persian from the Punjab University in 1944, he served in different capacities in some Urdu and English newspapers. He also remained assistant editor of the important Urdu journal, Adabi Dunya.

After serving for a while as a lecturer of Urdu at Lahore’s DAV College, he moved to Delhi after partition. Securing a job in the Press Information Department, he was posted to Srinagar. Offered the professorship of Urdu in the Jammu University, he moved there in 1977. After retirement, he continues to be there as professor emeritus for life.

Jagan Nath Azad has been attending mushairas and delivering lectures and has written about most of his foreign trips. However, while writing about Pakistan he never calls it a foreign country. Even Gen. Ziaul Haq told him that he should consider it to be his own country and come here whenever he felt like it. He openly accepts that the reception he receives in Pakistan is totally different from what he experiences in other countries. His love for Pakistan is evident from his verse:

Sham key saey mein Jamna ki ravani dekh kar
Mujhko aey Azad Ravi ka saman yad aa gaya

Jagan Nath Azad has won several awards from Pakistan, India, Russia and other countries. For the naats composed by him, he was given the Seerat-i-Pak Award by Bradford Publications of UK. Not only that, Jagan Nath Azad has written a long poem condemning the destruction of the Babri Mosque. Says he:

Hamarey dil ko tora hey imarat ko nahin tora
Khabasat ki bhi had hoti hey aey had torney waley

The books authored by Jagan Nath Azad include some on literary criticism while about eleven, both in English and Urdu, are on Iqbal. It would be interesting to know that soon after partition, Iqbal was almost banned in India. It was only through the efforts of Jagan Nath Azad that Iqbal is as highly respected there today as Khusrau, Meer or Ghalib. Even in Pakistan, it was Jagan Nath Azad’s whisper into the ears of Gen Ziaul Haq that led to the establishment of the Iqbal Chair in the Punjab University.

Many Indians, like Iqbal Singh and Hira Lal Chopra, have done extensive work on Iqbal. Dr Chaman Lal Raina has gone to the extent of converting his verses into Hindi. On his part, Dr Rafiq Zakaria, former chancellor of the Urdu University in Aligarh, has written a full book under the title, Iqbal: The Poet and the Politician, in which he has expressed surprise why Iqbal is not revered in India.

It goes to the credit of Jagan Nath Azad that he has all along tried to emphasise the fact that great and durable poetry transcends all barriers of caste, creed and colour. Being a humanist, Iqbal’s poetry echoes the sentiments and feelings of humanity at large. There is no denying that he has championed the cause of the exploited and oppressed people of the world.

I hope you read the above in full. Even as I read it for the third time, I am amazed at much of what is written here.

After reading that – especially the verses, one was left wanting more. So, let me leave you with this video of Prof. Azad from a mushaira – including some remarks and verses about Pakistan:

60 responses to “Prof. Jagan Nath Azad: Creator of Pakistan’s First National Anthem”

  1. Watan Aziz says:

    Correction: Dr Azad never claimed to have Mr. Jinnah on the matter of the national anthem.

  2. Watan Aziz says:

    Maybe, the Urdu “dan” author of Jang needs to understand in Urdu what he fails to read and comprehend in English.

    میرے تمام رشتہ داروں کو بھارت کے لئے روانہ ہوئے تھے اور میرے لئے لاہور جانے کے بارے میں سوچنا تکلیف دہ تھا. اپنے مسلمان دوستوں نے مجھے رہنے کے لئے درخواست کی. 1947 ، 9 اگست ، وہاں ریڈیو پاکستان لاہور میں میرا ایک دوست کے ذریعے جناح صاحب کی طرف سے ایک پیغام تھا. اس نے مجھے قائد اعظم سے کہا کہ تم پاکستان کے لئے ایک قومی ترانہ لکھنے کے لئے چاہتا ہے ‘.”

    Dr Azad never claimed to have Mr. Jinnah on the matte of the national anthem.

    So much for Urdu newspapers!

    If editors of Jang have any credibility, they will do the needful.

  3. Sameer says:

    http://jang.com.pk/jang/jun2010-daily/06-06-2010/c ol4.htm

    Jawad, this is not the way of scholars or seekers of truth. Dr Safdar Mahmood has quoted many historical references in his article. He’s even quoted Quaid’s ADC Mr Ata Rabbani, father of Raza Rabbani sahib, (May Allah bless both with long healthy life). He quotes Radio Pakistan’s record and also historian Ahmad Saeed’s book on Quaid’s visitors.
    Instead of refuting it straightaway Kindly Do Some Research and Answer Safdar’s “opinion”. If not then whatever Najam has said is also opinion.
    By the way the link you have given is that of an article by Ch. Fawad Hussain, an old and established protege of Musharraf, who is still trying to do the impossible task of bringing back that dictator at large. Fawad is one of the organizers of Musharrf’s yet-to-be-born All Pakistan Muslim League.
    I request you and Najam to read Safdar’s article again and reply with historical records and arguments, NOT JUST MERE OPINION. Kindly save this website’s crediblity
    http://jang.com.pk/jang/jun2010-daily/06-06-2010/c ol4.htm

  4. Jawed says:

    First I agree that of all our problems this is probably the least to get worked up about. Also, I think we are making too much of Safdar Mahmood, specially because this article from him really has no research or ‘facts’. This is an op-ed and that is all it is ‘opinion’. If he does have any evidence that the first anthem played was NOT by Azad then that is fine. but simply saying that he found nothing only means one thing: HE found nothing.

    More importantly, I think his own credibility as a historian and as a journalist is very clouded and controversial. So I think this is just a publicity-seeking ploy from him. For more on Safdar Mahmood and is “shurlis” see this column:
    http://www.jang.com.pk/jang/oct2009-daily/01-10-20 09/editorial/col11.gif

  5. Sameer says:

    اس کالم کامقصد صرف اور صرف سچ کی تلاش ہے نہ کہ کسی بحث میں الجھنا۔ میں اپنی حد تک کھلے ذہن کے ساتھ سچ کی تلاش کے تقاضے پورے کرنے کے بعد یہ سطور لکھ رہا ہوں۔ پچھلے دنوں میڈیا (پرنٹ اور الیکٹرانک) پر یہ دعویٰ کیا گیا کہ قائداعظم نے قیام پاکستان قبل 9اگست 1947 کو جگن ناتھ آزاد کو بلاکر پاکستان کاترانہ لکھنے کو کہا۔ انہوں نے پانچ دنوں میں ترانہ لکھ دیا جو قائداعظم کی منظوری کے بعد آزادی کے اعلان کے ساتھ ہی ریڈیو پاکستان سے نشر ہوااور پھر یہ ترانہ 18ماہ تک پاکستان میں بجتا رہا۔ جب 23فروری 1949کو حکومت ِ پاکستان نے قومی ترانے کے لئے کمیٹی بنائی تو یہ ترانہ بند کردیا گیا۔اس انکشاف کے بعد مجھے بہت سے طلبہ اوربزرگ شہریوں کے فون آئے جو حقیقت حال جاننا چاہتے تھے لیکن میرا جواب یہی تھا کہ بظاہر یہ بات قرین قیاس نہیں ہے لیکن میں تحقیق کے بغیر اس پر تبصرہ نہیں کروں گا۔ چنانچہ سب سے پہلے میں نے ان سکالروں سے رابطے کئے جنہوں نے قائداعظم پر تحقیق کرتے اورلکھتے عمر گزار دی ہے۔ ان سب کاکہنا تھا کہ یہ شوشہ ہے، بالکل بے بنیاد اور ناقابل یقین دعویٰ ہے لیکن میں ان کی بات بلاتحقیق ماننے کے لئے تیار نہیں تھا۔ قائداعظم اور جگن ناتھ کے حوالے سے یہ دعوے کرنے والے حضرات نے انٹرنیٹ پر کئی ”بلاگز“ (Blogs) میں اپنا نقطہ نظر اور من پسند معلومات فیڈ کرکے محفوظ کر دی تھیں تاکہ انٹرنیٹ کااستعمال کرنے والوں کوکنفیوز کیاجاسکے اور ان ساری معلومات کی بنیاد کوئی ٹھوس تحقیق نہیں تھی بلکہ سنی سنائی یاپھر جگن ناتھ آزاد کے صاحبزادے چندر کے آزاد کے انکشافات تھے جن کی حمایت میں چندر کے پاس کوئی ثبوت نہیں ہے۔
    سچ کی تلاش میں، میں جن حقائق تک پہنچا ان کاذکر بعد میں کروں گا۔ پہلے تمہید کے طور پریہ ذکرکرنا ضروری سمجھتا ہوں کہ جگن ناتھ آزاد معروف شاعر تلوک چند کا بیٹا تھا ۔ وہ 1918 میں عیسیٰ خیل میانوالی میں پیدا ہوا۔ اس نے 1937 میں گارڈن کالج راولپنڈی سے بی اے اور 1944 میں پنجاب یونیورسٹی سے ایم اے فارسی کیا۔ تھوڑاساعرصہ”ادبی دنیا“ سے منسلک رہنے کے بعد اس نے لاہور میں ”جئے ہند“نامی اخبار میں نوکری کرلی۔ قیام پاکستان کے بعد وہ ستمبر میں ہندوستان ہجرت کر گیا۔ اکتوبر میں ایک بار لاہور آیا اور فرقہ وارانہ فسادات کے خوف سے مستقل طور پر ہندوستان چلاگیا۔ وِکی پیڈیا (Wikipedia) اور All things Pakistan کے بلاگز میں یہ دعویٰ موجود ہے کہ قائداعظم  نے اپنے دوست جگن ناتھ آزاد کو 9اگست کو بلا کر پاکستان کاترانہ لکھنے کے لئے پانچ دن دیئے۔ قائداعظم نے اسے فوراً منظور کیا اور یہ ترانہ اعلان آزاد ی کے بعد ریڈیو پاکستان پر چلایاگیا۔ چندر نے یہ دعویٰ بھی کیا ہے کہ حکومت ِ پاکستان نے جگن کو 1979 میں صدارتی اقبال میڈل عطا کیا۔
    میراپہلا ردعمل کہ یہ بات قرین قیاس نہیں ہے ، کیوں تھا؟ ہر بڑے شخص کے بارے میں ہمارے ذہنوں میں ایک تصویر ہوتی ہے اور جو بات اس تصویرکے چوکھٹے میں فٹ نہ آئے انسان اسے بغیر ثبوت ماننے کو تیار نہیں ہوتا۔ قائداعظم سرتاپا قانونی اور آئینی شخصیت تھے۔ اس ضمن میں سینکڑوں واقعات کاحوالہ دے سکتاہوں۔ اس لئے یہ بات میری سمجھ سے بالا تر تھی کہ قائداعظم کسی کو ترانہ لکھنے کے لئے کہیں اور پھر کابینہ، حکومت یاماہرین کی رائے لئے بغیر اسے خود ہی آمرانہ انداز میں منظور کر دیں جبکہ ان کا اردو، فارسی زبان اور اردو شاعری سے واجبی سا تعلق تھا۔ میرے لئے دوسری ناقابل یقین صورت یہ تھی کہ قائداعظم نے عمر کامعتدبہ حصہ بمبئی اور دہلی میں گزارا۔ ان کے سوشل سرکل میں زیادہ تر سیاسی شخصیات، مسلم لیگی سیاستدان، وکلا وغیرہ تھے۔ پاکستان بننے کے وقت ان کی عمر 71 سال کے لگ بھگ تھی۔ جگن ناتھ آزاد اس وقت 29 سال کے غیرمعروف نوجوان تھے اور لاہور میں قیام پذیر تھے پھر وہ پاکستان مخالف اخبار ”جئے ہند“ کے ملازم تھے۔ ان کی قائداعظم سے دوستی تو کجا تعارف بھی ممکن نظر نہیں آتا۔
    پھر مجھے خیال آیا کہ یہ تو محض تخیلاتی باتیں ہیں جبکہ مجھے تحقیق کے تقاضے پورے کرنے اور سچ کا کھوج لگانے کے لئے ٹھوس شواہد کی ضرورت ہے۔ ذہنی جستجو نے رہنمائی کی اورکہاکہ قائداعظم کوئی عام شہری نہیں تھے جن سے جو چاہے دستک دے کرمل لے۔ وہ مسلمانان ہند و پاکستان کے قائداعظم اور جولائی 1947 سے پاکستان کے نامزد گورنر جنرل تھے۔ ان کے ملاقاتیوں کاکہیں نہ کہیں ریکارڈ موجود ہوگا۔ سچ کی تلاش کے اس سفر میں مجھے 1989میں چھپی ہوئی پروفیسر احمد سعید کی ایک کتاب مل گئی جس کا نام ہے Visitors of the Quaid-e-Azam ۔ احمد سعید نے بڑی محنت سے تاریخ وار قائداعظم کے ملاقاتیوں کی تفصیل جمع کی ہے جو 25اپریل 1948تک کے عرصے کااحاطہ کرتی ہے۔ اس کتاب میں قائداعظم کے ملاقاتیوں میں جگن ناتھ آزاد کاکہیں بھی ذکر نہیں ہے۔ ”پاکستان زندہ باد“ کے مصنف سید انصار ناصری نے بھی قائداعظم کی کراچی آمد 7اگست شام سے لے کر 15 اگست تک کی مصروفیات کاجائزہ لیا ہے۔ اس میں بھی آزاد کا ذکر کہیں نہیں۔ سید انصار ناصری کو یہ تاریخی اعزاز حاصل ہے کہ انہوں نیقائداعظم کی 3جون 1947 والی تقریرکااردو ترجمہ آل انڈیاریڈیو سے نشر کیاتھا اور قائداعظم کی مانند آخر میں پاکستان زندہ باد کا نعرہ بھی بلند کیا تھا۔ لیکن سچی بات یہ ہے کہ پھر بھی میر ی تسلی نہیں ہوئی۔ دل نے کہا کہ جب 7اگست 1947 کو قائداعظم بطور نامزد گورنر جنرل دلی سے کراچی آئے تو ان کے ساتھ ان کے اے ڈی سی بھی تھے۔ اے ڈی سی ہی ملاقاتوں کا سارااہتمام کرتا اور اہم ترین عینی شاہد ہوتا ہے اورصرف وہی اس سچائی کی تلاش پر مہرثبت کرسکتا ہے۔ جب قائداعظم کراچی اترے تو جناب عطا ربانی بطور اے ڈی سی ان کے ساتھ تھے اور پھرساتھ ہی رہے۔ خدا کاشکر ہے کہ وہ زندہ ہیں لیکن ان تک رسائی ایک کٹھن کام تھا۔ خاصی جدوجہد کے بعد میں بذریعہ نظامی صاحب ان تک پہنچا۔ جناب عطا ربانی صاحب کا جچا تلا جواب تھا کہ جگن ناتھ آزاد نامی شخص نہ کبھی قائداعظم سے ملا اور نہ ہی میں نے کبھی ان کانام قائداعظم سے سنا۔ اب اس کے بعد اس بحث کا دروازہ بند ہوجاناچاہئے تھا کہ جگن ناتھ آزا د کو قائداعظم نے بلایا۔ اگست 1947 میں شدید فرقہ وارانہ فسادات کے سبب جگن ناتھ آزاد لاہور میں مسلمان دوستوں کے ہاں پناہ لیتے پھررہے تھے اور ان کو جان کے لالے پڑے ہوئے تھے۔ان حالات میں ان کی کراچی میں قائداعظم سے ملاقات کاتصو ر بھی محال ہے۔ یہی وجہ ہے کہ خود جگن ناتھ آزاد نے کبھی یہ دعویٰ نہیں کیا حالانکہ وہ پاکستان میں کئی دفعہ آئے حتیٰ کہ وہ علامہ اقبال کی صد سالہ کانفرنس کی تقریبات میں بھی مدعو تھے جہاں انہوں نے مقالات بھی پیش کئے جو اس حوالے سے چھپنے والی کتاب میں بھی شامل ہیں ۔ عادل انجم نے جگن ناتھ آزاد کے ترانے کاشوشہ چھوڑا تھا۔ انہوں نے چندر آزاد کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ جگن ناتھ آزاد کو 1979 میں صدارتی اقبال ایوارڈ دیا گیا۔ یہ سراسر جھوٹ ہے۔ میں نے صدارتی اقبال ایوارڈ کی ساری فہرست دیکھی ہے اس میں آزاد کا نام نہیں۔ پھر میں کابینہ ڈویژن پہنچا اور قومی ایوارڈ یافتگان کا ریکارڈ کھنگالا۔ اس میں بھی آزاد کا نام نہیں ہے۔ وہ جھوٹ بول کر سچ کوبھی پیار آ جائے۔ اب آیئے اس بحث کے دوسرے حصے کی طرف… ریڈیو پاکستان کے آرکائیوز گواہ ہیں کہ جگن ناتھ آزاد کاکوئی ترانہ یا ملی نغمہ یا کلام 1949 تک ریڈیو پاکستان سے نشر نہیں ہوا اور 15اگست کی درمیانی شب جب آزادی کے اعلان کے ساتھ پہلی بار ریڈیو پاکستان کی صداگونجی تو اس کے بعد احمد ندیم قاسمی کا یہ ملی نغمہ نشر ہوا۔
    پاکستان بنانے والے، پاکستان مبارک ہو
    ان دنوں قاسمی صاحب ریڈیو میں سکرپٹ رائٹر تھے۔ 15اگست کو پہلا ملی نغمہ مولانا ظفر علی خان کا نشر ہوا جس کا مصرعہ تھا ”توحید کے ترانے کی تانیں اڑانے والے“
    میں نے یہیں تک اکتفا نہیں کیا۔ اس زمانے میں ریڈیو کے پروگرام اخبارات میں چھپتے تھے۔ میں نے 14 اگست سے لے کر اواخر اگست تک اخبارات دیکھے۔ جگن ناتھ آزاد کا نام کسی پروگرام میں بھی نہیں ہے۔ سچ کی تلاش میں، میں ریڈیو پاکستان آرکائیو ز سے ہوتے ہوئے ریڈیو کے سینئر ریٹائرڈ لوگوں تک پہنچا۔ ان میں خالد شیرازی بھی تھے جنہوں نے 14اگست سے21 اگست 1947 تک کے ریڈیو پروگراموں کا چارٹ بنایا تھا۔ انہوں نے سختی سے اس دعویٰ کی نفی کی۔ پھر میں نے ریڈیو پاکستان کا رسالہ ”آہنگ“ ملاحظہ کروایا جس میں سارے پروگراموں کی تفصیلات شائع ہوتی ہیں۔ یہ رسالہ باقاعدگی سے 1948 سے چھپنا شروع ہوا۔ 18ماہ تک آزاد کے ترانے کے بجنے کی خبردینے والے براہ کرم ریڈیو پاکستان اکادمی کی لائبریری میں موجود آہنگ کی جلدیں دیکھ لیں اور اپنے موقف سے تائب ہوجائیں۔ میں اس بحث میں الجھنا نہیں چاہتا کہ اگر آزادی کا ترانہ ہمارا قومی ترانہ تھا اور وہ 1949 تک نشر ہوتارہا تو پھر اس کا کسی پاکستانی کتاب، کسی سرکاری ریکارڈ میں بھی ذکر کیوں نہیں ہے اور اس کے سننے والے کہاں چلے گئے؟ اگر جگن ناتھ آزاد نے قائداعظم کے کہنے پر ترانہ لکھا تھا تو انہوں نے اس منفرد اعزاز کا کبھی ذکرکیو ں نہ کیا؟ جگن ناتھ آزاد نے اپنی کتاب ”آنکھیں ترستیاں ہیں“ (1982) میں ضمناً یہ ذکر کیا ہے کہ اس نے ریڈیو لاہور سے اپنا ملی نغمہ سنا۔ کب سنا اس کاذکر موجود نہیں۔ اگر یہ قائداعظم کے فرمان پر لکھا گیا ہوتا تو وہ یقینا اس کتاب میں اس کاذکر کرتا۔ آزاد کے والد تلوک چند نے نعتیں لکھیں۔ جگن ناتھ آزاد نے پاکستان کے لئے ملی نغمہ لکھا جو ہوسکتا ہے کہ پہلے کسی وقت ریڈیو پاکستان سے نشر ہوا ہو لیکن یہ بات طے ہے کہ جگن ناتھ آزاد نہ کبھی قائداعظم سے ملے، نہ انہوں نے پاکستان کا قومی ترانہ لکھا اور نہ ہی ان کا قومی ترانہ اٹھارہ ماہ تک نشر ہوتارہا یا قومی تقریبات میں بجتا رہا۔
    قائداعظم بانی پاکستان اور ہمارے عظیم محسن ہیں۔ ان کے احترام کا تقاضا ہے کہ بلاتحقیق اوربغیر ٹھوس شواہد ان سے کوئی بات منسوب نہ کی جائے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*